مہمان نوازی–ملفوظاتِ محبوبِ ذات

مہمان نوازی

حضور سرکارِ عالی تمام مریدین و حاضرینِ دربار کی بہترین کھانوں سے تواضع فرماتے لیکن خود اپنے معمول کے کھانے پر اکتفا فرماتے۔ حاضرین کو ہر طرح کی آسائش بہم پہنچاتے۔ کھانا اور بستر وغیرہ ہر ایک کو مہیا فرماتے۔ آپ کی مہمان نوازی کا اہم نکتہ یہ تھا کہ آپ رات کا کھانا اس خیال سے تناول نہ فرماتے مبادا کوئی شخص رات کو دیر سے دربار شریف آئے تو کھانا کھائے بغیر نہ سوئے۔ اگر کبھی ایسی صورت پیدا ہوتی تو آپ اپنا کھانا لا کر اس شخص کو دے دیتے۔ اس اصول پر تمام عمر پابند رہے تاکہ روزِ محشر کوئی شخص یہ نہ کہہ سکے کہ وہ آپ کے دربار میں رات کو بھوکا سویا تھا۔ آپ کا یہ سنہری اصول اُسوۂ حسنہ کی بہترین مثال ہے۔

صوفی عبد العزیز ٹھیکیدار اور خلیفہ شیر محمد‘ کار میں نقص پیدا ہونے کی وجہ سے رات کے گیارہ بچے دربار شریف پہنچے۔ اس وقت لنگر تقسیم ہو چکا تھا۔ حضور سرکار عالی نے گھر سے اپنا کھانا لا کر ان کو کھلایا اور خود بھوکے رہے۔
ڈاکٹر احمد علی صاحب‘ پی۔ ایچ۔ ڈی‘ اپنی والدہ اور دوست‘ مجتبےٰ حسن صاحب‘ کے ہمراہ اس وقت دربار شریف پہنچے جب لنگر تقسیم ہو چکا تھا۔ یہ تینوں حضرات اس وقت حلقۂ غلامی میں شامل نہ تھے۔ حضور سرکارِ عالی نے مہمانوں کے لئے گھر سے اپنا اور بچوں کا کھانا لا کر انہیں دے دیا۔ اگلے روز ڈاکٹر صاحب کی والدہ نے ان کو بتایا کہ وہ کھانا بچوں کے لئے تھا جو حضور پاک نے لا کر مہمانوں کو دے دیا اور بچوں کو ان کی والدہ نے تھپک تھپک کر سلا دیا۔ اس سے بہتر ایثار اور مہمان نوازی کی مثال کیا ہو سکتی ہے؟ ما سوا خانودۂ رسالت مآب ﷺ کے‘ کسی دوسری جگہ اخلاق محمدی ﷺ کا یہ بہترین اور صحیح نمونہ نہیں ملے گا۔ ڈاکٹر صاحب کی والدہ نے یہ بھی بتایا کہ اُنہوں نے ایسی ایثار کی مثال ایران اور عراق میں بھی نہیں دیکھی۔ اس حسنِ اخلاق سے مثاثر ہو کر تینوں مہمانوں نے آپ کے دست ِ حق پر بیعت کر لی۔ ڈاکٹر احمد علی صاحب (پروفیسر گورنمنٹ کالج لاہور) اکثر اس واقع کا دوستوں میں ذکر کیا کرتے تھے۔

اے دل حضورِ حق میں عجز و نیاز ہو جا
دل نذرِ ناز کر دے اور دل نواز ہو جا
فطرت کوئی نتیجہ خود ہی نکال لے گی
بندہ اسی کا بن کر بندہ نواز ہو جا


Advertisements
This entry was posted in ملفوظاتِ محبوبِ ذات, محبوبِ ذات and tagged , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

اپنی رائے نیچے بنے ڈبے میں درج کر کے ہم تک پہنچائیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s