وسیع القلبی–ملفوظاتِ محبوبِ ذات

وسیع القلبی

آپؒ کسی کے سوال کو کبھی رد نہ فرماتے۔ جس کی زندہ مثالیں یہ ہیں کہ آپ کے پاس ایک نہایت قیمتی بلجیم ساخت کی بندوق تھی۔ ایک روز صفائی کے لئے کو َر سے باہر نکالی۔ حاضرین میں سے چمپئین سٹور نیلا گنبد لاہور کے مالک کی نگاہ بندوق پر پڑی تو بندوق حاصل کرنے کے لئے اس کا دل للچایا۔ آپؒ پر اس کا حال دل منکشف ہوا تو آپؒ نے بلا تامل بندوق اس کے حوالے کر دی۔
آپؒ کے پاس ایک پارکر کا گولڈن قیمتی قلم تھا۔ آپؒ کے ایک مرید قاضی صاحب‘ پولیس سب انسپکٹر‘ نے چاہا کہ ایسا قلم اس کے پاس بھی ہونا چاہیے۔ ابھی وہ سوچ رہا تھا کہ بلا تاخیر وہ قلم اس کے سپرد کر دیا۔ دونوں مریدین کے پاس یہ تبرکات آج بھی موجود ہیں۔ دیگر ایسی لا تعداد مثالیں ہیں جو سرکارِ عالی  کی وسیع القلبی‘ سخاوت اور عطاء کا پتا دیتی ہیں۔

Advertisements
This entry was posted in ملفوظاتِ محبوبِ ذات, محبوبِ ذات and tagged , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

اپنی رائے نیچے بنے ڈبے میں درج کر کے ہم تک پہنچائیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s